تفتان میں 3روز سے پھنسے ایرانی ٹرانسپورٹرز, ڈارئیوروں کو ایران جانے کی اجازت دیدی گئی

aiksath.com.pk

تفتان:کورونا وائرس کے پیش نظر پاکستان ایران سرحد کی بندش کے باعث تفتان میں 3 روز سے پھنسے ایرانی ٹرانسپورٹرز اور ڈارئیوروں کو ایران جانے کی اجازت دے دی گئی۔امیگریشن حکام کا کہنا ہے کہ ایرانی ٹرانسپورٹرز کو اپنی گاڑیاں بھی واپس ایران لے جانیکی اجازت دے دی گئی ہے۔

حکام کے مطابق تفتان میں پاک ایران سرحد پر امیگریشن گیٹ دیگر آمدورفت کے لیے بدستور بند ہے۔رپورٹ کے مطابق 300سے زائد ایرانی ٹرانسپورٹرز اور ڈرائیورز گزشتہ 3 روز سے تفتان میں پھنسے ہوئے تھے۔خیال رہے کہ ایران میں کورونا وائرس کے کیسز میں اضافے کے بعد حفاظتی اقدامات کے پیش نظر تفتان میں پاک ایران سرحد گذشتہ 3 روز سے بند ہے اورکسی کو تفتان سے ایران اور ایران سے پاکستان جانے کی اجازت نہیں دی جارہی ہے۔

حکام کے مطابق تفتان میں آئسولیشن سینٹر قائم کردیا گیا ہے اور زائرین کوپاکستان ہاس میں ٹھہرایاگیا ہے۔دوسری جانب تفتان بارڈر پر امیگریشن گذشتہ 3 روز سے بند ہونے کے باعث سرحد کیدونوں اطراف گاڑیوں کی قطاریں لگی ہوئی ہیں اور  سرحد کیدونوں اطراف زائرین سمیت دیگر افراد بھی پھنسے ہوئے ہیں۔

ذرائع کے مطابق ایران جانے والے مال بردار کنٹینرز میں مالٹا سمیت دیگر سامان لدا ہواہے اور اگر مزید ایک آدھ دن مالٹے کے کنٹینرز نہیں چھوڑے گئے تو وہ خراب ہوجائیں گے اور لاکھوں روپے کے نقصان کا خدشہ ہے۔

پاکستان کے پڑوسی ملک ایران میں کورونا وائرس کی موجودگی کے سبب پاک ایران سرحد آج تیسرے روز بھی بند ہے۔ایف آئی اے کے مطابق پاک ایران باڈر تفتان پر آج بھی امیگریشن بند ہے جبکہ پروونشل ڈیزاسٹر منیجمنٹ اتھارٹی (پی ڈی ایم اے) کی جانب سے آئسولیشن سینٹر قائم کر دیا گیا ہے۔

لیویز کا کہنا ہے کہ ایران سے آنے والے زائرین کوپاکستان ہاوس میں ٹھہرایا گیا ہے۔ پروونشل ڈیزاسٹر منیجمنٹ اتھارٹی کے مطابق ایران سے تفتان بارڈر کے ذریعے پاکستان پہنچنے والے مسافروں کو تفتان میں 14 دن تک لازمی ٹھہرایا جائے گا۔ پی ڈی ایم اے کا کہنا ہے کہ ان 14 دنوں کے دوران مسافروں کا مکمل طبی معائنہ کیاجائیگا۔