پاکستان میں پانچ سالوں میں 261 پولیو کیسز کی نشاندہی

aiksath.com.pk

اسلام آباد : پاکستان میں گزشتہ پانچ سالوں کے دوران  261 پولیو کیسز کی نشاندہی کی گئی تفصیلات ایوان بالا میں پیش کر دی گئیں ۔ موجودہ حکومت کے دور میں سب سے زیادہ 175 پولیو کیسز رپورٹ ہوئے ۔ پولیو میں اضافے کے معاملہ کو متعلقہ قائمہ کمیٹی کے سپرد کر دیا گیا ہے  ۔

سینیٹر سسی پلیجو کے سوال کے تحریری جواب میں وزارت نیشنل ہیلتھ سروسز کی طرف سے آگاہ کیا گیا ہے کہ پاکستان میں 2015 ء میں پولیو کے 54 ، 2016 ء میں 20 ، 2017 ء میں 8 ، 2018 ء میں 12 ، 2019 ء میں 146 اور رواں سال 2020 ء میں پاکستان میں 21 پولیو کے نئے کیسز کی نشاندہی ہوئی ہے

۔ رپورٹ میں اعتراف کیا گیا ہے کہ پاکستان میں پولیو کیسز میں 2018 ء میں تیزی سے اضافہ ہوا ۔ 2020 ء میں قومی ایمرجنسی ایکشن پلان کا اعلان کیا گیا ۔ سینٹ کا اجلاس چیئرمین سینٹ محمد صادق سنجرانی کی صدارت میں ہوا ۔

وفاقی وزیر پارلیمانی امور اعظم خان سواتی نے کہا کہ کرونا وائرس کے حوالے سے مشیر صحت بریف کر سکتے ہیں مگر مشیر سینٹ میں نہیں آ سکتا اس لیے سینٹ کی ہول کمیٹی کا اجلاس طلب کیا جائے تاکہ مشیر صحت وہاں بریفنگ دے سکیں ۔

چیئرمین نے کہا کہ اس حوالے سے جلد اجلاس طلب کیا جائے گا ۔ وزیر پارلیمانی امور اعظم خان سواتی نے کہا کہ پولیو کیسز سے متعلق سرکاری رپورٹ سے خود مطمئن نہیں ہوں ۔ پولیو کے حوالے سے اگر کوئی کرپشن بد انتظامی اور غفلت ہوئی ہے تو ذمہ داران کو ضرور کیفر کردار تک پہنچایا جائے ۔

ملک کے عوام کو مطمئن کرنا ضروری ہے کیونکہ پولیو میں اضافے کے حوالے سے غفلت کا مظاہرہ کرنے والوں نے پاکستان میں انسانیت کے خلاف جرم کیا ہے چیئرمین سینٹ نے پولیو بڑھنے کے معاملہ کو متعلقہ قائمہ کمیٹی کے سپرد کر دیا