یورپ اور امریکہ میں بھی احتجاجی مظاہرے کرنے کا اعلان

aiksath.com.pk

میرپور۔۔جموں کشمیر لبریشن فرنٹ کے سینئر وائس چیئرمین عبدالحمید بٹ نے مقبوضہ کشمیر کی نازک صورت حال پر عالمی برادری کی توجہ مبذول کرانے کے لیے آ زادکشمیر و گلگت بلتستان زون کے علاوہ برطانیہ ، یورپ اور امریکہ میں احتجاجی مظاہرے کرنے کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے موجود پارٹی قیادت کو ہدایت کی ہے کہ وہ موجودہ ناگفتہ دہ صورتحال کا ادراک کرتے ہوئے فوری احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ شروع کریں اور سفارتی سطح پر عالمی اداروں اور بین الاقوامی برادری کو ملاقاتوں و تحریروں کے ذریعے بھارت کے ناپاک عزائم اور چیئرمین یاسین ملک کی جیل منتقلی ان کی بگڑتی ہوئی حالت ِصحت سے متعلق پائے جانے والی تشویش سے آگاہ کریں۔ میر پور ، آزادکشمیر میں قائم پارٹی کے مرکزی دفترمیں مختلف وفود سے بات چیت میں عبدالحمید بٹ نے یاسین ملک کی گرفتاری بھارت سرکار کی بوکھلاہٹ سے تعبیر کرتے ہوئے کہا کہ جموں جیل منتقلی کے پیچھے بھارت کے ناپاک اور مکروہ عزائم چھپے ہوئے ہیں انہوں نے کہا جیل جموں کشمیر لبریشن فرنٹ کی قیادت کا دوسرا گھر ہے اور ایسے ظالمانہ و جابرانہ ہتھکنڈوں کے استعمال سے ہماری قیادت اور ناہی حق اور انصاف پر مبنی جدوجہد میں مصروف کشمیری قوم گھبرانے والی ہے۔ بٹ نے بھارت سرکار اور نام نہاد گورنر کے علاوہ کٹھ پتلی ریاستی انتظامیہ کو آڑے ہاتھے لیتے ہوئے کہا کہ جموں کشمیر لبریشن فرنٹ ایک مضبوط قلعہ ہے اور ماضی گواہ ہے کہ اس کی قیادت ہر اول دستے کی مانند قربانیاں دے چکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ محمد یاسین ملک صرف ایک نام ہی نہیں بلکہ اپنے آپ میں ایک تحریک ہے جس کے ہزاروں پروانے اندرون و بیرون ریاست موجود ہیں۔ عبدالحمید بٹ نے بھارتی حکومت کے اس سفاخانہ رویے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جس ہند جنونیت کا ناچ بھارت جیسے نام نہاد جمہوری ملک میں اقلیتوں کے ساتھ کھیلا جارہا ہے وہ پوری دنیا کے لئے قابل تشویش ہی نہیں بلکہ قابل مذمت بھی ہے۔بھارتی جیل خانوں میں ہند و جنونیوں کے ہاتھوں بے بس جیل انتظامیہ کی صورتحال کے پیش ِ نظر بٹ صاحب نے بھارت اور اس کی ریاستی کٹھ پتلی انتظامیہ کو وارننگ دی کہ اگر یاسین ملک یا دوسرے کسی کشمیری قیدی کو کسی بھی قسم کی کوئی گزند پہنچی تو اس کے نتائج کے ذمہ دار وہ خود ہوں گے۔انہوں نے یاسین ملک کی صحت کے مسائل کو سامنے رکھتے ہوئے اقوام عالم بالخصوص اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کے عالمی اداروں سے فوری مداخلت کی اپیل کرتے ہوئے بھارت سے یاسین ملک سمیت دیگر گرفتار شدگان کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا۔عبدالحمید بٹ نے اندرون و بیرون ریاست موجود پارٹی قیادت کو ہدایت کی کہ وہ چیئرمین محمد یاسین ملک کی پی ایس اے کے تحت گرفتاری ، جماعت اسلامی مقبوضہ جموں کشمیر پر عائد غیر قانونی پابندی ، مقبوضہ جموں کشمیر میں بھارتی ریاستی دہشت گردی ،سیز فائرلائن کے دونوں اطراف سے گولہ بارود کے تبادلے کے نتیجے میں ہونے والے جانی و مالی نقصانات ، گرفتاریوں کا لامتناہی سلسلہ اور اسیران کو بھارت کے مختلف جیلوں میں منتقلی ، ریاست میں نافذ موروثی اسٹیٹ سبجکٹ قانون کے ساتھ آرٹیکل 35-Aکی آڑ میں کھلواڑ کی کوششوں، NIAکی جانب سے قائدین کے خلاف چھاپوں اوردیگر بھارتی جبرواستبداد کی کاروائیوں کے خلاف احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ جاری رکھیں۔ انہوں نے آزادکشمیر و گلگت بلتستان زون کے علاوہ برطانیہ ، یورپ اور امریکہ میں موجود پارٹی قیادت کو خصوصی ہدایت جاری کرتے ہوئے کہا کہ وہ موجودہ ناگفتہ دہ صورتحال کا ادراک کرتے ہوئے فوری احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ شروع کریں اور سفارتی سطح پر عالمی اداروں اور بین الاقوامی برادری کو ملاقاتوں و تحریروں کے ذریعے بھارت کے ناپاک عزائم اور چیئرمین یاسین ملک کی بگڑتی ہوئی حالت ِصحت سے متعلق پائے جانے والی تشویش سے آگاہ کریں۔عبدالحمید بٹ نے بھارت کی جانب سے جماعت اسلامی مقبوضہ جموں کشمیر پر عائد پابندی کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے امیر جماعت ڈاکٹر فیاض اور ترجمان ایڈوکیٹ زاہد علی سمیت جماعت سے وابستہ سینکڑوں کارکنان کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا۔