فضل الرحمان نے حکومت کو غیر مشروط اپنی خدمات پیش کردی

aiksath.com.pk

اسلام آباد :سربراہ جمعیتِ علمائے اسلام مولانا فضل الرحمان نے حکومت کوغیر مشروط اپنی خدمات پیش کردی رضا کارعوام کے لیئے “صاف رہو خوش رہو” مھم میں گلاب کے پھولوں کی تقسیم جاری رکھے گی مولانا کی ہدایت پر رضا کاروں پر مشتمل اینٹی کرونا سیل قائم کردیا گیا ہے ،

الانصار اینٹی کرونا وائرس سیل مرکزی سالار انجنیئر عبد الرزاق عابد لاکھو کی نگرانی میں کام کرے گا۔ بلوچستان سے حاجی دین محمد مقرر، سندھ سے حافظ سراج، خیبرپختونخوا مولانا عزیز احمد، پنجاب سے مولانا حسن معاویہ اور گلگت بلتستان سے مولانا دلدار عزیزی سیل کے ممبران نامزد کیے گئے ہیں۔

اپنے بیان میں مولانا فضل الرحمن کا کہنا تھا کہ ملک بھر سے 40 ہزار رضا کار امدادی ٹیموں میں کام کرنے کے لئے پیش کریں گے، خیبرپختونخواہ سے 15 ہزار، سندھ سے 10 ہزار، بلوچستان سے 10ہزار، رضاکار ہوں گے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ پنجاب سے 3 ہزار اور گلگت بلتستان سے 2 ہزار رضا کاروں کی کھیپ تیار ہے، سالار اپنی صوبائی امرا اور نظما کی توسط سے صوبائی حکومتوں سے رابطہ میں آئیں۔ کرونا وائرس کے مکمل خاتمے تک رضا کار بلا تفریق بلامعاوضہ کام کریں گے، رضاکار ماسک، سینیٹائزر، کے علاوہ راشن بھی مستحقین کے گھروں تک پہنچایئں گے، رضاکارعوام کے لیئے “صاف رہو خوش رہو” مھم میں گلاب کے پھولوں کی تقسیم جاری رکھے گی۔

مولانا فضل الرحمن نے کرونا وبا کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے تعاون کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ تمام تر انتظامی اقدامات میں جمعیت علمائے اسلام اور اپوزیشن کی تمام جماعتیں تعاون کریں گی، مشکل گھڑی میں حکومت کا فرض تھا کہ وہ قوم کو متحد رکھنے کے لیے عملی اور مخلصانہ اقدام کرتی،اسلام آباد پہنچ کر جلد اس بارے میں متفقہ لائحہ عمل تیار کریں گے۔

انھوں نے اپیل کی ہے کہ جے یو آئی (ف) اور اپوزیشن کی تمام جماعتوں کے کارکنان مقامی انتظامیہ کے ساتھ بھرپور تعاون کریں اور عوام الناس میں کورونا وائرس کے متعلق آگاہی مہم چلائیں۔مولانا فضل الرحمن نے تمام مساجد کے خطبہ، مدارس کے مہتمم اور علما کرام سے اپیل کی ہے کہ وہ تمام احتیاطی تدابیر کو مدنظر رکھتے ہوئے اپنا بھرپور کردار ادا کریں۔

انصاالاسلام کے رضاکار مقامی انتظامیہ سے رابطہ کریں اور کورونا وائرس سے بچاؤ کے حوالے سے جو بھی فرائض طے ہو وہ ذمہ داری ادا کریں۔ گزشتہ روز ڈیرہ اسماعیل خان سے جمعیت علمائے اسلام کے مرکزی ترجمان اور سابق پارلیمنٹرین حافظ حسین احمد سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا نے کہا کہ مشکل گھڑی میں حکومت کا فرض تھا کہ وہ قوم کو متحد رکھنے کے لیے عملی اور مخلصانہ اقدام کرتی لیکن اس کے باوجود جمعیت علمائے اسلام اس مرحلے پر آگے بڑھ رہی ہے۔ہم چاہتے ہیں کہ پاکستان کے عوام کو اس وبا سے محفوظ رکھا جائے اور اس حوالے سے تمام تر اقدامات میں جمعیت علمائے اسلام اور اپوزیشن کی تمام جماعتیں تعاون کریں گی۔

مولانا فضل الرحمن نے کہا ہے کہ اس مشکل گھڑی میں اپوزیشن کی تمام جماعتیں اور حکومت ملکر قوم کو کورونا وائرس کی مشکل سے نکالیں۔حافظ حسین احمد کے مطابق مولانا فضل الرحمن نے تمام مساجد کے خطبہ، مدارس کے مہتمم اور علما کرام سے اپیل کی ہے کہ وہ تمام احتیاطی تدابیر کو مدنظر رکھتے ہوئے اپنا بھرپور کردار ادا کریں۔ انصاالاسلام کے رضاکاروں کو بھی ہدایت کی گئی ہے کہ وہ مقامی انتظامیہ سے رابطہ کریں اور کورونا وائرس سے بچا کے حوالے سے جو بھی فرائض طے ہو ان کو بھرپور انداز میں ادا کریں،

انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت حکومت کا فرض تھا کہ اس حوالے سے قوم کو متحد رکھنے کے لیے عملی اور مخلصانہ اقدام کرتی لیکن اس کے باوجود جمعیت علمائے اسلام اس مرحلے پر آگے بڑھ رہی ہے اور ہم چاہتے ہیں کہ پاکستان کے عوام کو اس وبا سے محفوظ رکھا جائے اور اس حوالے سے تمام تر اقدامات میں جمعیت علمائے اسلام اور اپوزیشن کی تمام جماعتیں تعاون کریں گی۔اسلام آباد پہنچ کر جلد اس بارے میں متفقہ لائحہ عمل تیار کریں گے۔