زبردست خان مہر کی گرفتاری ، خورشید شاہ کی مشکلات میں اضافہ

aiksath.com.pk

اسلام آباد : نیب کے ہاتھوں پاکستان پیپلز پارٹی کے سینئر رہنماخورشید شاہ کے مبینہ فرنٹ مین زبردست خان کی گرفتاری سے خورشید شاہ کی مشکلات میں اضافہ ہوگیا ہے.

قومی احتساب بیورو(نیب )کے ریجنل بیوروسکھر نے کاروائی کرتے ہوئے زبردست خان مہر کو ان کے بنگلے سے گرفتار کیا نیب ٹیم زبردست مہر کے گھر کی تلاشی کے دوران ملنے والے اہم کاغذات اورذاتی گاڑی بھی اپنے ہمراہ نیب آفس میںلے آئی ۔

زبردست خان مہر پر خلاف ضابطہ متعدد ٹھیکے دینے کا الزام ہے اورنیب نے شواہد ملنے پر زبردست مہر کو گرفتار کیا ہے،زبردست مہر پر حکومت کی جانب سے مبینہ طور پر گندم پر سبسڈی دینے کے باوجود عوام کو فائدہ نہ دینے کا بھی الزام ہے۔

نیب حکام کے مطابق گندم سبسڈی کیس میں مبینہ طور پر ایک ارب روپے مالیت کی کرپشن ہے اور زبردست مہرنے روہڑی میں مبینہ طور پر سرکاری زمین پر آئس فیکٹری بھی بنا رکھی ہے ۔

ذرائع کے مطابق نیب نے زبردست علی مہر کو طلب کیا تھا تاہم ملزم نے سندھ ہائی کورٹ سے عبوری ضمانت لے رکھی تھی۔نیب کی جانب سے زبردست خان مہر پر محکمہ خوراک میں باردانہ کی خرید و فروخت کے ذریعے مبینہ کرپشن کا الزام عائد کیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما خورشید شاہ بھی اآمدن سے زائد اثاثہ جات کیس میں نیب حراست میں ہیں ، خورشید شاہ پر مبینہ کرپشن سے 500 ارب روپے سے زائد اثاثے بنانے کا الزام ہے۔