بلوچستان کے ڈیموں کے لیے فنڈز وفاق نے دئیے نہ صوبے نے

aiksath.com.pk

اسلام آباد (عابدعلی آرائیں ) بلوچستان میں تجویز کئے گئے پانچ ڈیموں کاپی سی ون تیار کرلیا گیا تاہم وفاقی و صوبائی حکومت کی طرف کسی بھی ڈیم کے لئے فنڈز مختص نہ کیے جانے کا انکشاف ہوا ہے ۔

ایک ساتھ نیوز اینڈ ویوز کو دستیاب سرکاری دستاویزات میں انکشاف کیا گیا ہے کہ سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے آبی وسائل نے 3ستمبر2019کو بلوچستان کے محکمہ آبپاشی کو ہدایت کی تھی کہ پانچ ڈیموں ” ارگس ڈیم ضلع قلعہ سیف اللہ،قرم خرسان ڈیم ضلع قلعہ سیف اللہ ” برات خیل چینہ ڈیم ضلع قلعہ سیف اللہ ، ذمہ خلغئی ڈیم ضلع قلعہ سیف اللہ اور شاران ڈیم ضلع شیرانی میں قائم کرنے کا عمل شروع کیا جائے اس ضمن میں منصوبوں کا پی سی ون تیار کیا جائے ،
محکمہ آبپاشی نے تمام منصوبوں کا پی سی ون تیار کرنے کے بعد قائمہ کمیٹی کو رپورٹ بھجوائی ہے کہ ضلع قلعہ سیف اللہ کے علاقہ مسلم باغ میں ”ارگس ڈیم ” قائم کیا جائے گا جس پرلاگت کا تخمینہ 13کروڑ 15لاکھ 30ہزار روپے لگایا گیا ہے،ضلع قلعہ سیف اللہ کے علاقہ مورگاہ فقیر زئی ایریا میں تجویز کئے گئے ”قرم خرسان ڈیم ضلع قلعہ سیف اللہ ”کی تعمیر پر لاگت کا تخمینہ 12کروڑ ساڑھے پانچ لاکھ روپے ، ضلع قلعہ سیف اللہ کے علاقہ برات خیل میں برآت خیل ڈیم کی تعمیر پر لاگت کا تخمینہ 11کروڑ2لاکھ 30 ہزار روپے لگایا گیا ہے ۔

ضلع قلعہ سیف اللہ میں تعمیر ہونے والے چوتھے ڈیم” ذمہ خلغئی کی تعمیر پر لاگت کا تخمینہ 6کروڑ28لاکھ50ہزار روپے لگایا گیا ہے ۔
بلوچستان کے ضلع شیرانی میں تجویز کئے گئے ”شیرانی ڈیم ”کی تعمیر کا تخمینہ 11کروڑ روپے لگایا گیا ہے ۔
رپورٹ کے مطابق بلوچستان میں ان ڈیمز کی تعمیر سے صوبے کے دونوں اضلاع میں لاکھوں لوگوں کو فائدہ ہوگا اور لوگوں کا معیار زندگی بہترکرنے میں مدد ملے گی ۔